Categories
Other

9 Naughty Jokes Hidden in Classic Kids Movies

Categories
Other

14 weirdest s$xual encounters people had with Strangers

Categories
Other

Girl goes off on Facebook after only receiving $5 tip for a $100 worth meal

Categories
Other

Lesbian Photographer Releases Disturbing Photographs After Visiting Torture Clinic That ‘Treats’ Homos*xuality

Categories
Other

Never Marry A Guy Who Has These 15 Habits

Imagine yourself with a guy who does not love you, a guy who does not respect you, who does not go out of his way to protect you. And he just sees you as a woman who will do all his chores. Usually, you fall for guys who are not worthy of your love and attention. But then love is blind too. If you love someone truly then you would want to marry that person instantly. But marriage is a very big and life-changing step. As the famous quote says that a successful marriage requires falling in love with the same person over and over again. So how can you fall for a person who does not give you the value you deserve? Hence, before making up your mind to marry a guy always look at the greater picture. Never marry a guy who has these 15 habits given below:

Breaks Promises:

Excuses And Some More Excuses:

Does Not Consider Relationship Rules:

Hates Animals:

Categories
Other

10 Things Every Woman Wishes You Did During Sex

No matter how into each other you are, relationships will see sex peaks and valleys. It’s easy to fall into a rut or resort to ‘solo time’ during one of those droughts. But let’s kick-start that steam. What’s the best way? It’s simple, try harder. Keep things fun and pleasurable for both of you — in and out of the bedroom — and your relationship may just reach new heights.

Pay attention to her non-verbal signs

Sadly, lots of men don’t know how to tune into their female lovers. “I hear stories over and over again about how men are just not responding to the signals that women send. Learn to be a responsive, tuned-in lover and you will gain serious appreciation from your partner(s),” says Pella Weisman, a dating coach and Licensed Marriage & Family Therapist. Along with verbal expression, pay attention to their bodily cues (moaning, heavier breathing, increased lubrication) and do more of that.

Explore commonly ignored hot spots

A woman wants a man to explore her inside and out with his fingers, and make it an adventure for the two of them. “‘Let’s see if I can find your G-spot,’ for example, could be a mutual exploration for the couple,” says Dr. Gilda. Be sure also to fondle with and kiss oft-ignored erogenous zones like her inner thigh, ear, and even her lower back.

Dirty talk

Women want to feel wanted. “They want to know they are turning you on, and how. They want to feel hot, desired, appreciated, honored,” says Weisman. Individual preferences vary (dirty, descriptive, romantic), but try out different varieties to see what elicits the best response from your partner.

Categories
Other

Disney Stars Then And Now You Will Shocked To See

Disney stars then and now; they develop so quick Disney stars have all the time been a great supply of leisure, and with its authentic productions we spend hours of enjoyable.

Many people grew up watching the movies of Lindsay Lohan and Hilary Duff, having fun with the Selena Gomez and Miley Cyrus sequence.

However time passes general, and now the celebrities of this well-known manufacturing home have matured, have turn into glorious musical performers, have appeared in movies of different studios and have left us with their mouths open with their scandals.

Miley Cyrus

Zendaya

Categories
Uncategorized

20 Times Military Women Showed the World How Incredible They Are, Both in and out of Uniform

Categories
Other

Daughter Sends Parents A Vacation Photo, Forgets To Take Out A Bottle Of Lube

It seems like every dad secretly wants to be a private investigator, because you can’t hide anything from them. Try to be discreet, try to keep a few secrets, but dad will get to the bottom of every story.

“dad sees all” story on her timeline that’s gone viral for how embarrassing it is. She sent her mom a vacation photo of herself and her boyfriend in their hotel room. They didn’t realize that in one corner of the image they were showing more than they intended: But dad saw that amidst their vacation toiletries was a bright orange bottle of Durex, a lube generally used for “personal massage.”

Categories
Other

35 Women Who Ditched Their Razors For No-Shave ‘Januhairy’ Share Progress Pics

A new year brings new trends and resolutions to try. This year, many women are out trying to smash the patriarchy and unrealistic beauty standards and expectations of women all over the world. To do this, some have decided to partake in a no-shave “Januhairy.” The idea came from student Laura Jackson, who said that the idea behind the campaign was to empower women to understand more about themselves and about others

Essentially, the goal is that women grow out their hair all January long without shaving. And, to celebrate how far they have come, women have been sharing their progress pictures so far, in the second week of January.

Categories
Uncategorized

27 Teachers Confess The Dumbest Questions A Student Has Ever Asked Them

They say there are no stupid questions, only stupid answers — but who are we kidding. People ask stupid f*cking questions all the time. And as a wonderfully tolerant and forgiving society, we mock those people relentlessly online for ever and ever and ever, amen.

Some amazing moment captured by Photographer On The Best Day Of His Life These Are The amazing Photos you will see today home You Like It…

Categories
Other

27 Teachers Confess The Dumbest Questions A Student Has Ever Asked Them

They say there are no stupid questions, only stupid answers — but who are we kidding. People ask stupid f*cking questions all the time. And as a wonderfully tolerant and forgiving society, we mock those people relentlessly online for ever and ever and ever, amen.

Some amazing moment captured by Photographer On The Best Day Of His Life These Are The amazing Photos you will see today home You Like It…

Categories
Other

10+ reasons why the world will never be like it once was

All the changes that are constantly taking place around us are the natural result of the passage of time. But that doesn’t mean we can’t feel nostalgic for what once was — for a time when we lived differently, when our ideas were much simpler and our perspective much more straightforward. And we wouldn’t have had it any other way.

We picked 10+ insightful cartoons which we think prove our point.

when our ideas were much simpler and our perspective much more straightforward.
Categories
اہم خبریں

کنٹرول لائن پر بھارتی فوج کی غیر معمولی نقل وحرکت, محدود جنگ کا آغاز ہوگیا

اسلام آباد (نیوز ڈیسک) مسئلہ کشمیر کی وجہ سے پاک بھارت افواج ایک دوسرے کے آمنے سامنے ہیں لائن آف کنٹرول پر غیر علانیہ محدود جنگ کا آغاز ہو چکا ہے،پاک فوج اور دیگر سیکورٹی ادارے مکمل جواب دینے کے لیے تیار ہیں۔قومی اخبار کی ایک رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ بھارت کی 15ویں کور کے مخصوص یونٹس اور

ویسٹرن ائیر کمانڈ کی فارمیشنز میں غیر معمولی نقل وحرکت سپاٹ کی گئی ہے جو لائن آف کنٹرول پر کسی بڑی شرارت کا عندیہ دے رہی ہے۔افواجِ پاکستان اور دیگر سیکیورٹی ادارے بھارت کی جانب سے کسی بھی کاروائی کا جواب دینے کے لیے مکمل تیار ہیں۔لائن آف کنٹرول پر غیر علانیہ محدود جنگ کا آغاز ہو چکا ہے۔اعلیٰ حکومتی زرائع نے ٹاپ سیکورٹی آفیشلز کا حوالہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ بھارتی فوج کی ناردرن کمانڈ کے تحت آپریٹ کرنے والی 15 ویں کور کے ایڈوانس یونٹس کی موومنٹ لائن آف کنٹرول کے قریب سپاٹ کی گئی ہے۔ جب کہ بھارتی ائیرفورس کی ویسٹرن کمانڈ کی فارمیشنز میں بھی غیر معمولی نقل و حرکت سپاٹ کی گئی ہے۔ویسٹرن ائیر کمانڈ کے تحت آپریٹ کرنے والی ائیر بیسز پٹھانکوٹ،ادھم پور، آوانتی پور، لی اور سرینگر میں بھی غیر معمولی نقل و حرکت سپاٹ کی گئی جس سے پتہ چلتا ہے کہ بھارت کنٹرول لائن پر کسی بڑی شررات کی پلاننگ کر رہا ہے۔عسکری انٹیلی جنس ادارے لائن آف کنٹرول اور انٹرنیشنل بارڈر پر بھارت کی تمام موومنٹس پر نظر رکھے ہوئے ہیں جب کہ فیلڈ انٹیلی جنس سورسز سے بھی انفارمیشن موصول ہو رہی ہے۔بھار ت 27فروری کے ایڈونچر میں پاکستان کی تیاری اور ایکشن ایبل ان ٹیلی جنس کا مظاہرہ دیکھ چکا ہے

Categories
اہم خبریں

بریکنگ نیوز: سندھ اسمبلی کی موجودہ نمبر گیم ۔۔۔۔ جلد پاکستانی سیاست میں کیا بھونچال آنے والا ہے ؟ سہیل وڑائچ کی دھماکہ خیز پیشگوئی

لاہور (ویب ڈیسک) سیاست میں حکومتیں گرانے اور بنانے میںوقتی حکمتیں توہوتی ہی ہیں مگر اس کے اثرات دہائیوں تک اپنا اثر رکھتے ہیں ۔پاکستان کی 72سالہ تاریخ میںاب تک یہ سلسلہ جاری ہے اور دلچسپ بات یہ ہے کہ سیاسی حکومتیں گرانے کیلئے آئین بنانے والے اس سے اخلاقی روگردانی کرتے نظر آتے ہیں۔

نامور کالم نگار سہیل وڑائچ اپنے ایک کالم میں لکھتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ گورنر جنرل کے اختیارات ہوں یا صدراور آرمی چیف کے ،ملک کے وسیع ترمفاد میںہرکوئی دوسرے کو گھر بھیجتارہا۔صوبہ پنجاب کی طرح سندھ بھی اسی طرح کی سازشوں کا مرکز رہاہے۔1990ء میں ہونے والی جام صادق کی سیاسی جمع تفریق ہویا مشرف دور میں ارباب غلام رحیم کی سرپرستی میں اکثریتی جماعت پیپلزپارٹی کو جوڑ توڑ کیساتھ سیاسی ’’اکثریت‘‘سے حکومت بنانے کی کوششیں کی جاتی رہی ہیں۔افسوس کی بات یہ ہے کہ سیاستدان ہی اپنے ذاتی مفادات کو فوقیت دیتے ہوئے نہ صرف غیر جمہوری عناصر کے ہاتھوں کھیلتے رہے بلکہ اگلے انتخابات میں ایک بار پھر ذاتی مفادات کیلئے ’’لوٹ کے بدوگھر کو آئے‘‘ کا مصداق بنے۔2018ء کے عام انتخابات کے بعد پیپلزپارٹی نے سندھ میں اکثریت حاصل کی اور حکومت سازی بھی کی۔ایک سال کے دوران مرکز کے کچھ وزرا کے بیانات سے یہ عیاں ہوا کہ سندھ میں دوبارہ سیاسی دائو پیچ کھیلنے کی تیاریاں کی جارہی ہیں لیکن کوئی ساز گار حالات میسر نہیں آسکے۔خبروں کے مطابق سندھ میں سندھ حکومت کو گھر بھیجنے کیلئے وہ سازگار حالات پیداہوچکے ہیں جس کی گزشتہ ایک سال میں پیش گوئیاں کی جارہی تھیں۔تبصروں اور تجزیوں کے مطابق وزیر اعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ کی نیب کی جانب سے گرفتاری متوقع ہے اور اس کے بعد سیاسی منظر نامہ میں پیپلزپارٹی کی حکومت کو ختم بھی کیاجاسکتاہے۔ سوال یہ ہے کہ اگر یہ ممکنات میں سے ہے تو سندھ کی سیاسی شطرنج میں کون سے مہرے اپنی جگہ بدلیں گے اور کیا ان ہائوس تبدیلی کی

حکمت عملی کامیاب ہوسکے گی؟اس تمام صورتحال کو سمجھنے کیلئے موجودہ سندھ اسمبلی کی پارٹی پوزیشن کو جاننا ضروری ہے۔سندھ اسمبلی میں اس وقت حکومتی جماعت پیپلزپارٹی 168میں سے 99نشستوں کیساتھ سرفہرست ہے۔اس کے مدمقابل پاکستان تحریک انصاف 30اراکین صوبائی اسمبلی کیساتھ دوسرے ،متحدہ قومی موومنٹ 21 نشستوں کیساتھ تیسرے جبکہ گرینڈ ڈیموکریٹک الائنس 14ایم پی ایز کیساتھ چوتھے نمبر پر ہے۔ تحریک لبیک پاکستان تین اور ایم ایم اے کا ایک ایم پی اے بھی اسمبلی میں موجودہ ہے۔پیپلزپارٹی کی 99نشستیں نکال دی جائیں تو باقی 69نشستیں رہ جاتی ہیں اور اگر انہیں اپوزیشن اتحاد بھی سمجھ لیاجائے تو کم از کم 16ایم پی ایز کو پارٹی سے ہٹ کر اپوزیشن کے نامزد وزیر اعلیٰ کو ووٹ دینا پڑے گا۔اگر وزیر اعلیٰ سندھ کو گھر بھیجاجائے تو پیپلزپارٹی کو اپنے کم از کم 16ایم پی ایز کی ناراضی ختم کرناہوگی۔ماضی میں کسی بھی اکثریتی جماعت کو حکومت سے نکالنے کیلئے فارورڈ بلاک تشکیل دیکر مطلوبہ نتائج حاصل کر لئے جاتے تھے لیکن اب آئین میں اس کی کوئی اجازت نہیں ۔ سیاسی جماعت میں فارورڈ بلاک بنانے پر آئین ہدایت دیتاہے کہ کسی پارلیمانی جماعت میں یہ بلاک نہیں بن سکے گا اگر کوئی پارلیمنٹیرین بلاک بنا ئے گاتووہ اپنی نشستیں کھو بیٹھے گا۔آئین میں واضح کر دیا گیا ہے کہ فارورڈ بلاک بنانے اور پارٹی قیادت کے فیصلوں سے انحراف ، وزیر اعظم اور وزیر اعلیٰ کے انتخاب میں پارٹی سربراہ کے فیصلے کے مطابق ووٹ نہ دینے یا وفاداری تبدیل کرنے کی صورت میں متعلقہ پارلیمینٹرین اپنی نشست سے ہاتھ دھو بیٹھے گا۔

وزیر اعظم اور وزیر اعلیٰ کا انتخاب خفیہ رائے شماری نہیں بلکہ اوپن ووٹنگ کے ذریعے ہوتا ہے اور پارٹی سربراہ کی ہدایت سے انحراف کرنے والارکن سامنے آجائے تواسے اسمبلی رکنیت منسوخ کرنے کیلئے آئینی کاروائی عمل میں لائی جا تی ہے۔اس سے روگردانی پر ان کے خلاف الیکشن کمیشن کو ریفرنس بھجوایا جا سکتا ہے ،اسی طرح وفاداری تبدیل کرنے اور فارورڈ بلاک بنانے والوں کو آئینی کاروائی کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔پارٹی سربراہ کو آئین کے تحت یہ اختیار حاصل ہے کہ پارٹی فیصلوں کی خلاف ورزی کرنے والے اراکین اسمبلی کے خلاف ریفرنسز بھجوا سکتے ہیں۔ گزشتہ دور حکومت میں خیبرپختونخوا میں فارورڈ بلاک بناکر وزیر اعلیٰ کے پی کے پرویز خٹک کو گھر بھیجنے کی تیاری کی جارہی تھی مگر اراکین اسمبلی کے خوف یا سیاسی بصیرت کو دیکھتے ہوئے ایسا کواقدام عمل میں نہیں لایاگیا۔موجودہ پنجاب گورنمنٹ میں پاکستان مسلم لیگ نواز کے کچھ ایم پی ایز بھی فارورڈ بلاک بنانے اورپارٹی پالیسیوں کی مخالفت کرتے ہوئے تحریک انصاف کے منتخب وزیر اعلیٰ سردار عثمان بزدار سے ملاقات کرچکے ہیں۔ تاریخ ایسے گروپ اور اراکین سے بھری پڑئی ہے جو اپنے ذاتی مفادات کو سامنے رکھتے ہوئے آئین اور جمہوری اداروں سے کھلواڑ کرتے ہیں جس سے سول اداروں کو ہزیمت کا سامناکرنا پڑتاہے۔دوسری جانب سوال یہ پیداہوتاہے کہ سیاسی جماعتیں ایسی کالی بھیڑوں کو اپنی سیاسی جماعتوں میں دوبارہ جگہ کیوں دیتے ہیں ؟۔نوٹ:مورخہ5اگست 2019ء کوروزنامہ جنگ میں چیئرمین سینیٹ کے انتخاب کے حوالے سے اشاعت خاص ’’ صادق سنجرانی کیسے جیتے ؟ شائع ہوا۔ اس حوالے سے مواد سینیٹ کی

آفیشل ویب سائٹ سے لیاگیاتھا ،جس پرسینیٹر پروفیسر ساجد میر نے اعتراض اٹھایا تھا کہ ان کی سیاسی وابستگی مسلم لیگ ق کی بجائے ن لیگ سے تھی ۔لہٰذا اس بابت حقائق کی درستگی کیلئے یہ تصیح شائع کی گئی ہے۔امکان 1:وزیر اعلیٰ سندھ مراد شاہ کی ممکنہ گرفتاری کے پیش نظر سندھ کے سیاسی منظر نامے میں تبدیلی کا امکان ہے۔کیایہ تبدیلی سندھ میں پیپلزپارٹی کیلئے بڑے نقصان کا پیش خیمہ تو نہیں ثابت ہوگی؟امکان یہ ظاہر کیا جارہا ہے کہ سندھ میں پیپلزپارٹی کا ایک الگ گروپ بننے جا رہا ہے جو سندھ کی موجودہ حکومت کو ختم کرکے نئی حکومت بنانے میں مددگار ثابت ہوگا۔یہ افواہیں اس وقت منظر عام پر آئی ہیں جب وزیر اعلیٰ سندھ کی ممکنہ گرفتاری کی خبریں سامنے آرہی ہیں۔باخبر ذرائع کے مطابق پیپلزپارٹی میں سندھ کی موجودہ صورتحال کو مدنظر رکھتے ہوئے چند اراکین صوبائی اسمبلی کی جانب سے نہ صرف فاوروڈ بلاک بنانے کی کوششیں کی جارہیں ہیں بلکہ دیگر ارکان کو ساتھ ملانے کیلئے روابط بھی کئے جارہے ہیں۔ یہ بھی کہا جارہا ہے کہ پیپلزپارٹی کے یہ اراکین مختلف سیاسی جماعتوں کے ساتھ بھی رابطے میں ہیں اور جیسے ہی وزیراعلیٰ گرفتار ہونگے یہ گروپ پیپلزپارٹی چھوڑ کر الگ ہوجائے گا۔اراکین اسمبلی میں نوابشاہ (شہید بینظیر آباد) اور تھرپار کر اور مبینہ طورپر مخدوم فیملی بھی اس گروپ میں پیش پیش ہوسکتی ہے۔دوسری جانب پیپلزپارٹی کے ایم پی ایز میں سے بیشتر پر ایف آئی اے اور نیب کیسز بھی ہیں جو وفاداری تبدیل کرنے کیلئے پریشر گروپ کا کام کرسکتے ہیں۔

گردش کرتی ہوئی خبروں کے مطابق سندھ میں 25سے زائدارکان پرمشتمل ایک فارورڈ بلاک تیار ہوگیا ہے جو کہ وزیر اعلیٰ سندھ مراد علی شاہ کی گرفتاری کا انتظار کر رہا ہے ۔سندھ سے آنے والی خبروں کے مطابق وزیر اعلیٰ سندھ مراد علی شاہ کی گرفتاری کے عمل میں آنے کی صورت میں آصفہ بھٹو زرداری کو الیکشن لڑوانے کے بعدوزیر اعلیٰ سندھ یا اپوزیشن لیڈر بنائے جانے کا امکان ظاہر کیا جارہا ہے۔امکان 2:دوسری ممکنہ صورتحال یہ بھی ہوسکتی ہے کہ باغی یا ناراض ہونے والے کو ایک الگ سیاسی جماعت کے طور پر سامنے لایاجاسکتاہے۔گردش کرتی ہوئی خبروں کے مطابق بلوچستان میں بلوچستان عوامی پارٹی کی طرز پر سندھ میں بھی ایک نئی جماعت سندھ عوامی پارٹی بنانے کا امکان ظاہر کیا جارہا ہے۔اس نئی بننے والی جماعت کے لئے پیپلزپارٹی کے ناراض اور نظر انداز ہونے والے اراکین اسمبلی کو اس نئی جماعت میں شامل کرنے کے لئے بااثر سیاسی شخصیات متحرک ہوتی نظر آرہی ہیں۔یہ بھی خبر ہے کہ لاڑکانہ اور سندھ بلوچستان کے سرحدی اضلاع کے سیاسی اثرورسوخ رکھنے والے اہم سیاسی خاندانوں کو اس سلسلے میں اہم ٹاسک سونپے گئے ہیں اور اس حوالے سے سندھ میں کم از کم 16اراکین اسمبلی سے نئی جماعت کی تشکیل کے حوالے سے بات چیت کا عمل بھی مکمل کر لیا گیا ہے۔یہ بھی امکان ظاہر کیا جارہا ہے کہ پیپلزپارٹی کے خلاف ہونے والی بغاوت کے کامیاب ہونے کی صورت میں سندھ ،بلوچستان کے اہم سیاسی خاندانوں کے ممبران صوبائی اسمبلی میں سے کسی کو مستقبل میں وزیر اعلیٰ سندھ بنانے کی بھی پیشکش کی جاسکتی ہے۔

امکان 3:مندرجہ بالا دونوں امکانات کی ناکامی کی صورت میں وفاق اپنے اختیارات کا استعمال کرتے ہوئے گورنر راج نافذ کر سکتے ہیں ۔ بنیادی طورپر گورنر راج کے دو آئینی طریقہ کار ہیں جس کے تحت صوبے کا انتظام گورنر چلاتا ہے۔آئین کے آرٹیکل234 کے تحت متعلقہ صوبہ کے گورنر کی رپورٹ پر اگر صدر مملکت کو یقین ہو جائے کہ صوبہ کی حکومت آئین اور قانون کے مطابق معاملات نہیں چلا سکتی تو وہ گورنر راج نافذ کرنے کا اعلان کر سکتے ہیں۔ گورنر راج نافذ کرنے کی ایک دوسری صورت یہ بھی ہے کہ پارلیمینٹ کے دونوں ایوان اپنے الگ الگ اجلاسوں میں کسی صوبہ میں گورنر راج کے نفاذ کے لئے قراردادیں منظور کر لیں تو صدر مملکت ان پر عملدرآمد کرتے ہوئے گورنر راج کے نفاذ کا صدارتی فرمان جاری کرتے ہیں۔اگر آئینی طریقہ کار کے تحت گورنر راج لگایاجائے تو دونوں ملک بھر کا سیاسی منظر نامہ بھی تبدیل ہوسکتا ہے۔گزشتہ سال کے آخر میں سندھ میں پیپلزپارٹی سے فاروڈ بلاک یا نئی سیاسی جماعت کی باتیں عروج پر تھیں ۔اس وقت سند ھ اسمبلی میں پیپلزپارٹی کی 99اراکین کے ساتھ اقتدارکی کرسی پر براجمان ہے۔ سندھ میں پیپلزپارٹی کی حکومت گر انے کے لئے 16 ایم پی ایز کی حمایت ضروری ہو گی۔سندھ میں پیپلزپارٹی کے اثرور سوخ کو توڑنے کیلئے مختلف ادوار میں مختلف اتحاد اور فاروڈ بلاگز بنتے رہے ہیں۔ 1990ء میں جب پیپلز پارٹی کی حکومت ختم ہوئی تو سندھ میں صوبائی رابطوں کے مشیر جام صادق نے پیپلزپارٹی کے خلاف ا ندرون خانہ بغاوت کی۔اس طرح پیپلزپارٹی کی اکثریت ہونے کے باوجود جام صادق نے

متحدہ قومی موومنٹ اور آزاد اراکین کے ساتھ سیاسی گٹھ جوڑ کیا اور ایک منظم حکمت عملی کے تحت سندھ کے نگران وزیر اعلیٰ بن گئے۔جام صادق کی پیپلزپارٹی کے خلاف دوسری سیاسی جماعتوں کو متحد کرنے کی پالیسیوں کو دیکھتے ہوئے 1990ء کے انتخابات میں پیپلزپارٹی کے خلاف حکمت عملی انتخابات سے پہلے کی گئی تھی اور اس بات کو یقینی بنایا گیا تھا کہ انتخابات کے بعد پیپلزپارٹی سندھ میں حکومت نہ بنا سکے۔ جام صادق نے مقامی جاگیر داروں،دائیں بازو کے سیاستدانوں اور ریاستی وسائل کا استعمال اور سب سے بڑھ کر متحدہ قومی موومنٹ کی مدد سے حکومت بنائی۔ اس مقصد کے حصول کیلئے پیپلزپارٹی کے اندر توڑ پھوڑ بھی کی گئی۔ اسی انتخاب میں پیپلزپارٹی کے بانی ذولفقار علی بھٹو کے کزن اور سندھ کے سابق وزیر اعلیٰ ممتاز بھٹو کی سربراہی میں ”سندھ نیشنل فرنٹ” کے نام سے اور ”سندھ نیشنل الائنس ” کے نام سے انتخابی اتحاد بھی بنے جو سندھ میں پیپلز پارٹی کو نقصان پہنچانے میں کامیاب نہ ہو سکے ۔پیپلزپارٹی کے خلاف سندھ میں کھل کر سازش کرنا آسان نہیں ، یہ وہی کر سکتا ہے جو یقین کی حد تک پیپلزپارٹی کی اندورنی سیاست کو جانتا ہو۔پیپلزپارٹی کے صوبائی اقتدار پر دوسری بار شب خون آمریت کے دورمیں مارا گیا۔ 2002ء کے انتخابات میں سندھ سے پیپلزپارٹی 51 نشستوں کے ساتھ سر فہرست تھی جبکہ متحدہ قومی موومنٹ 31،مسلم لیگ ق 14،نیشنل الائنس12 اور مسلم لیگ فنکشنل 9 نشستیں لینے میں کامیاب ہوئی۔ پیپلزپارٹی نے اکثریت حاصل کی تھی لیکن صوبے میں اسے اکثریت کے باوجود حکومت نہیں بنانے دی گئی۔ انتخابات کے فوراً بعد پیپلزپارٹی میں فارورڈ بلاک بنا کر جنرل مشرف کے حامیوں کی حکومت بناڈالی۔ پیپلزپارٹی کو حکومت سے دور کرنے کے بعد پرویز مشرف نے پہلے اپنے اتحادیوں میں سے ضلع گھوٹکی سے تعلق رکھنے والے علی محمد مہر کووزیر اعلیٰ کا عہدہ دیا جبکہ دوسری بار یہی نوازش جون 2004ء میں تھرپارکر کے ارباب غلام رحیم کو وزیر اعلی کا عہدہ دے کر کی گئی۔اس سازش سے حکومت تو کرلی گئی مگر 2008ء میں پیپلزپارٹی نے زیادہ اکثریت سے سندھ میں حکومت بنائی مگر فارورڈ بلاک کا کوئی مستقبل تھا،نہ ہوگا۔تیسرا بڑا پیپلزپارٹی مخالف گروپ 2018ء کے عام انتخابات سے قبل بنایاگیا۔ ایک بار پھرگرینڈ ڈیموکریٹک الائنسـ‘ بنایا گیا۔ ماضی کے اتحادوں کی طرح اس انتخاب میں بھی پیپلزپارٹی نے اپنے مخالفین کو 130جنرل نشستوں میں سے صرف 11نشستیں لینے دیں۔ پیپلزپارٹی کے خلاف سندھ میں قریباً گزشتہ ہر انتخابات میں ـ’سیاسی اتحاد‘ توبنا ضرور مگر حقیقت یہی ہے کہ کسی بھی اتحاد نے عام انتخابات میں پیپلزپارٹی کو بڑانقصان نہیں پہنچاسکا۔جی ڈی اے اور مقتدر حلقوں کی جانب سے ایک بار پھر سیاسی جمع تفریق ہونے کو ہے مگر دیکھنا یہ ہوگا کہ پیپلزپارٹی کی حکمت عملی کیاہوگی۔

Categories
اہم خبریں

بریکنگ نیوز: سی پیک منصوبے کے حوالے سے ایسی چیز چین سے پاکستان پہنچا دی گئی کہ دنیا دنگ رہ گئی

اسلام آباد (ویب ڈیسک آن لائن) جہاں چین پاک اقتصادی راہداری منصوبہ پاکستان کی معاشی ترقی کے لئے خصوصی اہمیت اختیار کر گیا ہے وہی یہ منصوبہ دونوں ممالک کے درمیان پائے جانے والے دوستی کے رشتے کو مزید گہرا کرنے کی صلاحیت بھی رکھتا ہے۔ اب چین پاک اقتصادی راہداری منصوبہ کے تحت


بجلی کے ترسیلی نظام کی اپ گریڈیشن کے پہلے منصوبے پر چین نے1.7ارب ڈالرمالیت کے آلات پاکستان پہنچادیے ہیں۔فوشون الیکٹرک پورسلین مینوفیکچرنگ کمپنی چائنہ کی جانب سے30 ڈائریکٹ کرنٹ (ڈی سی) 660 کلوواٹ آف زنک آکسائیڈ لائٹنگ کولر پاکستان بھیجے گئے ہیں۔ منصوبے پر لاگت کا تخمینہ1.658ارب ڈالر ہے اور2021 تک مکمل کرلیا جائے گا۔پارٹی ورک کمیٹی آف شین فو کے رکن وانگ ژو کژی نے کہاہے کہ کمپنی ایک سڑک اور ایک خطے کے وژن پر کام کررہی ہے۔ انھوں نے کہاکہ منصوبے کی تکمیل سے پاکستان میں بجلی کے ترسیلی نظام کی بہتری میں مدد ملے گی اور بجلی کے کمرشل وگھریلو صارفین کو بجلی کی بلا تعطل فراہمی کویقینی بنایا جاسکے گا۔دوسری خبر کے مطابق چینی وزیرخارجہ کے دورہ پاکستان مکمل ہونے کے بعد مشترکہ اعلامیہ جاری کردیا گیا جس میں کہا گیا کہ خطے کی بدلتی صورتحال دونوں ممالک کے مضبوط تعلقات میں رکاوٹ نہیں بن سکتے۔چینی وزیر خارجہ کے دورہ پاکستان مکمل ہونے کے بعد مشترکہ اعلامیہ جاری کردیا گیا جس کے مطابق چینی وزیر خارجہ نے وزیراعظم، وزیر خارجہ اور آرمی چیف سے ملاقات کی جس میں باہمی دلچسپی کے دوطرفہ ، علاقائی اور بین الاقوامی امور پر تبادلہ خیال کیا گیا۔مشترکہ اعلامیہ کے مطابق پاکستان اور چین نے مختلف فورمز پر باہمی تعاون پر اطمینان کا اظہار کیا، علاقائی و عالمی تبدیلیوں سے دونوں ممالک کی شراکت داری متاثر نہیں ہوسکتی اور خطے کی بدلتی صورتحال دونوں ممالک کے مضبوط تعلقات میں رکاوٹ نہیں بن سکتے جب کہ دونوں ممالک نے علاقائی اور عالمی امور پر تعاون کو مستحکم کرنے، سی پیک کے جاری منصوبوں کو جلد مکمل کرنے پر اتفاق کیا۔مشترکہ اعلامیہ میں سی پیک منصوبوں سے روزگار کی فراہمی، صنعتی پارکس اور زراعت کے شعبے میں تعاون، دونوں ممالک کا خطے امن، استحکام اور خوشحالی کے لیے مشترکہ کوششوں اور اسٹریٹجک اعتماد اور سدا بہار تعاون جاری رکھنے پر اتفاق کرتے ہوئے کہا کہ دونوں ممالک کے درمیان سی پیک منصوبہ ایک نئے فیز میں داخل ہو چکا ہے۔مشترکہ اعلامیہ میں دونوں ممالک کا دوطرفہ قیادت کے دوروں اور ملاقاتوں کا تسلسل جاری رکھنے پر اتفاق کیا گیا اور دونوں ممالک کا قیادت کے درمیان پائے جانے والے اتفاق رائے کو عملی جامہ پہنانے کے عزم کا اظہار کرتے ہوئے کہا گیا کہ پاکستان اور چین کو باہمی مسائل پر ایک دوسرے کی حمایت حاصل ہے، دونوں ممالک مستقبل میں بھی کمیونٹی کی تعمیر و ترقی میں تعاون جاری رکھیں گے۔مشترکہ اعلامیہ کے مطابق چین اور پاکستان کے درمیان تعلقات کی مضبوطی دونوں ممالک کی خارجہ پالیسی کی ترجیح ہے، چین اور پاکستان کے درمیان اسٹریٹجک کوآپریٹو پارٹنرشپ خطے کے امن و استحکام کے لئے انتہائی اہم قرار دیتے ہوئے کہا گیا کہ پرامن، مستحکم، معاون اور خوشحالی جنوبی ایشیاء تمام فریقین کے مفاد میں ہے۔اعلامیہ میں چینی وفد نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر ایک تاریخی تنازعہ ہے اور چین کشمیر کی صورتحال پر گہری نظر رکھے ہوئے ہیں، مسئلہ کشمیر اقوام متحدہ کے چارٹر کے مطابق حل کیا جائے، خطے کے فریقین کو باہمی عزت و برابری کی بنیاد پر تنازعات کا پرامن حل نکالنے کی ضرورت ہے، مقبوضہ کشمیر پر کسی بھی یک طرفہ اقدام سے صورتحال خراب ہو سکتی ہے، جبکہ مقبوضہ کشمیر اقوام متحدہ کے چارٹر،سلامتی کونسل کی قراردادوں کے مطابق حل ہونا چاہیے جب کہ چین کا پاکستان کی علاقائی خودمختاری، سالمیت اور قومی وقار کے تحفظ کے کیے حمایت جاری رکھنے کا اعلان بھی کیا۔

Categories
اہم خبریں

عابد علی مرحوم ہمیشہ قمیض کے گلے کے اوپر ولے دو بٹن کھول کر اپنے سینے کے سیاہ بال کیوں نمایاں رکھتے تھے ؟ مستنصر حسین تارڑ نے انوکھی کہانی بیان کر دی

لاہور (ویب ڈیسک) ابھی ایک دو برس پیشتر مجھے کسی پروگرام کی ریکارڈنگ کے سلسلے میں پاکستان ٹیلی ویژن لاہور جانے کا اتفاق ہوا تو مجھے وہاں قبرستان ایسی خاموشی محسوس ہوئی حالانکہ رونق بہت تھی۔ چہل پہل تھی لیکن میرے کانوں میں ایک سناٹا اترتا تھا۔ لاہور ٹیلی ویژن کی راہداریاں سنسان پڑی تھیں۔

نامور کالم نگار مستنصر حسین تارڑ اپنے ایک کالم میں لکھتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ مجھے وہاں شائبے سے ہوتے تھے کہ یہ کون تھا جو میرے قریب سے گزر گیا اور مجھ سے ملنے کے لئے ٹھہرا بھی نہیں۔ سلام دعا تک نہیں کی۔خیام سرحدی‘ شفیع محمد‘ جمیل فخری‘ ظل سبحان‘ فاروق ضمیر‘ محبوب عالم‘ بدیع الزماں‘ ایوب خان‘ ایم شریف کون تھا۔ اگر یہ طاہرہ نقوی تھی تو مسکرائے بغیر کیوں چلی گئی کہ میں اس کی خوبصورتی کی وجہ سے اسے منی مدھوبالا کہا کرتا تھا۔ ٹیلی ویژن کی راہداریوں میں پرچھائیاں ظاہر ہوتی تھیں اور تحلیل ہو جاتی تھیں۔ یہاں تک کہ ڈرامہ پروڈیوسرز کے کمرے بھی ویران پڑے تھے۔ جانے یہ سب لوگ کہاں چلے گئے تھے یا ایک ہی روز چھٹی کر گئے تھے۔ کہاں ہے ہمارا گیسو دراز نایاب محمد نثار حسین۔ ہمارا چن جی یاور حیات اور کنور آفتاب‘ تینوں اپنے اپنے انداز کے موجد اور منفرد تخلیق کار، کہاں گئے؟۔ مجھے احساس ہوا کہ مجھے اتنے عرصے کے بعد لاہور ٹیلی ویژن کی عمارت میں داخل نہیں ہونا چاہئے تھا کہ میں جس بستی میں شب و روز بسر کرتا تھا وہ تو اجڑ چکی۔ میرے دوست اور شناسا تو کب کے یہاں سے منتقل ہو چکے۔ جانے کہاں کہاں کن شہروں کی مٹی میں مٹی ہو چکے۔ آج سویرے میری بیٹی عینی نے ہسپتال روانہ ہونے سے پیشتر آزردہ ہو کر کہا ’’ابو وہ عابد علی بھی مر گیا۔ اچھا انسان تھا۔ جب کبھی ہمارے گھر آتا تھا تو کتنی محبت سے ملتا تھا‘‘ مجھے اس کی موت

پر ایک دھچکا سا لگا لیکن میں سنبھل گیا کہ ان دنوں مجھے ایسے دھچکے لگتے ہی رہتے ہیں اور میں ان کا عادی ہو چلا ہوں۔ لاہور ٹیلی ویژن کی راہداریوں میں ابھی عابد علی کھلے گلے کی قمیض میں دکھائی دے رہا تھا اور ابھی وہ بھی دیگر پرچھائیوں میں شامل ہو کر ایک اور پرچھائیں ہو کر اوجھل ہو گیا۔ عابد علی جب پہلے پہل لاہور ٹیلی ویژن کی راہداریوں میں دکھائی دیا تو ان زمانوں میں میں نے اپنے آپ کو صرف اداکاری کے لئے وقف کر رکھا تھا۔ فل ٹائم ایکٹر تھا اور ابھی میزبانی اور ڈرامہ نگاری کی جانب ملتفت نہ ہوا تھا۔ انور سجاد‘ اشفاق احمد‘ محمد نثار حسین اور یاور حیات مجھ پر مہربان تھے اور میرے حصے میں چند یادگار کردار آ گئے۔ اگرچہ کچھ حضرات کا خیال تھا کہ میں صرف اپنی شکل کی کھٹی کھاتا ہوں اور یہ کچھ ایسا غلط بھی نہ تھا لیکن مجھے میرے قدرتی اور نارمل انداز کی وجہ سے ڈراموں میں کاسٹ کیا جاتا تھا۔ اس لئے بھی کہ میں نے اداکاری کی باقاعدہ تربیت کہیں سے حاصل نہ کی۔ نہ ریڈیو کا رُخ کیا اور نہ سٹیج کا۔ میں صرف ٹیلی ویژن کیمروں کا پروردہ تھا۔ بقول شاہ حسین‘ شاہ حسین جولاہا‘ جو آہا سو آہا۔ یعنی میں بھی ایک جولاہا تھا لیکن جیسا تھا بس ویسا ہی تھا۔ عابد علی ایک پروجاہت نوجوان تھا۔ ناک نقشے میں مردانگی تھی۔ قدآور تھااور ہمیشہ قمیض کے گلے کے اوپر ولے دو بٹن کھول کر اپنے سینے کے سیاہ بال نمایاں کرتا تھا۔ ہم نے سنا کہ وہ کوئٹہ سے آیا ہے

اور بنیادی طور پر ریڈیو صداکار ہے۔ وہ جمیل ملک کے بہت قریب تھا ملک صاحب نہایت بنے ٹھنے رہتے ہیں۔ ریڈیو پر پروڈیوسر تھے۔ ڈرامے لکھتے اور کبھی کبھی اداکاری سے بھی شغف فرماتے۔ نہایت تھیٹریکل شخص تھے۔ علاوہ ازیں عابد علی کی نصرت ٹھاکر اور عظمیٰ گیلانی سے بھی بہت دوستی تھی۔ ڈراموں میں چھوٹے موٹے کردار ادا کرنے کے بعد وہ اپنی صلاحیت اور شخصیت کی وجہ سے ٹیلی ویژن کے نمایاں اداکاروں میں شمار ہونے لگے۔ وہ ہمارے بیشتر اداکاروں کی مانند پھنے خاں نہیں تھا کہ ہر وقت ڈینگیں مارتا رہتا کہ میں نے فلاں ڈرامے میں نصیرالدین شاہ کو مات کر دیا۔ تاریخ رقم کر دی وغیرہ۔ اس میں انکسار بہت تھا۔ وہ خود نہیں لوگ اس کی اداکاری کی بے پناہ توصیف کرتے تھے۔ ہم دونوں نے اکٹھے بہت سے ڈراموں میں اداکاری کی جن میں ’’ایک حقیقت سو افسانے‘‘ سرفہرست ہے لیکن ہم دونوں قریب ان زمانوں میں آئے جب اس نے میرے لکھے ہوئے سیریل’’ہزاروں راستے‘‘ میں ایک کروڑ پتی کا مرکزی کردار ادا کیا۔ اسے راشد ڈار نے پروڈیوس کیا تھا۔ میں اپنے ڈراموں اور سیریلز کی ایک دو ابتدائی ریہرسلیں خود لیتا تھا تاکہ اداکاروں کو سمجھا سکوں کہ مجھے کیسا کردار درکار ہے۔’’ہزاروں راستے ‘‘ کا آغاز ان زمانوں کے مطابق نہایت شاہانہ تھا یعنی عابد علی اپنے ذاتی جہاز میں سفر کر رہا ہے۔ جہاز لینڈ کرتا ہے تو اس کا سیکرٹری اورنگزیب لغاری ایک سیاہ لیموزین کے ساتھ اس کے استقبال کے لئے موجود ہے اور اس کا بیٹا فردوس جمال غائب ہے۔

ریہرسل کے آغاز میں عابد علی کہنے لگا’’تارڑ صاحب۔ آپ مجھ سے کیا چاہتے ہیں کہ میں یہ کردار کس طورکروں‘‘ تو میں نے کہا عابد تم اس سیریل میں ایک کروڑ پتی اور لالچی شخص ہو جس کا موٹو ہے’’پیسے کی کوئی سرحد نہیں۔ دولت کا کوئی پرچم نہیں‘‘ تو فی الحال تم اپنی قمیض کے اوپر والے بٹن بند کرنا شروع کر دو یعنی معزز ہوجائو۔ علاوہ ازیں اپنی تھیٹریکل آوازکو قابو میں رکھتے ہوئے قدرتی انداز اختیار کرو‘ عابد علی نے وہ کردار اتنے موثر انداز میں ادا کیا کہ اس برس اسے ’’ہزاروں راستے‘‘ پر پہلی بار ٹیلی ویژن کے بہترین اداکار کا حقدار ٹھہرایا گیا۔ اس سیریل کے لئے بہترین ڈرامہ نگار کے طور پر میری نامزدگی بھی ہوئی۔ اسی طور جب میں نے ’’سورج کے ساتھ ساتھ‘‘ تحریر کیا تو اس میں بھی عابد علی کو ایک اہم کردار کے لئے منتخب کیا اور اس نے حق ادا کر دیا۔ اگرچہ سورج کے ساتھ ساتھ پر سپریم کورٹ آف پاکستان کے فیصلے کی وجہ سے مجھے کچھ مسائل درپیش ہوئے لیکن ہم سب سنبھل گئے اور یہ سیریل اب بھی لوگوں کی یادداشت میں محفوظ ہے۔ مجھے یاد ہے کہ سورج کے ساتھ ساتھ میں موچی کا کردار ادا کرنے پر خیام سرحدی کو پرائڈ آف پرفارمنس سے نوازا گیا اور وہ ایسا جذباتی شخص تھا کہ فون پر رونے لگا کہ یہ ایوارڈ آپ کو پہلے ملنا چاہئے تھا۔ آپ میرے استاد ہیں۔ میں انکار کردوں گا۔ بہرحال بڑی مشکل سے اسے سمجھایا۔ ایک دو برس بعد جب مجھے یہ صدارتی ایوارڈ ملا تو پہلا فون خیام سرحدی کی جانب سے آیا اور وہ پھرجذباتی ہو رہا تھا۔ اس کی موت کا سبب بھی شائد اس کی شدید جذباتی خصلت تھی۔ انہیں دنوں جب عابد علی عروج پر تھا، لاہور ٹیلی ویژن کی راہداریوں میں ایک نہایت چلبلی ‘ خوش شکل اور سوہنی آنکھوں والی لڑکی حمیرہ چودھری دکھائی دینے لگی۔ وہ نہ صرف گلو کارہ تھی بلکہ اداکاری بھی کمال کی کرتی تھی۔ اشفاق احمد کے ڈرامے ’’غریب شہر‘‘ میں وہ میرے ساتھ کاسٹ ہوئی۔ اس میں شرارت بہت تھی۔ عابد علی اس کی عشوہ طرازیوں کی تاب نہ لا سکا اور اس کے ساتھ شادی کر لی اور اسے ایک گھریلو خاتون میں ڈھال دیا۔ میرے پاس لاہورمیں ماضی کے کچھ نقش تصویروں کی صورت میں کہیں نہ کہیں موجود ہوں گے اور ان میں عابد علی ہو گا لیکن میں اس کی تصویریں تلاش نہیںکروں گا کیونکہ وہ ان میں زندہ ہے۔ میں اگر اس کی کسی تصویر کو دریافت کرکے دیکھوں گا تو وہ مرجائے گا۔ عجیب بات ہے اسے لحد میں اتار کر اس کے کفن کے بندکھولے گئے ہوں گے جیسے وہ اپنی قمیض کے اوپر والے بٹن کھولے رکھتا تھا۔عابد علی بھی سورج کے ساتھ ساتھ چلتا بالآخر اس کے ساتھ ہی ڈوب گیا۔

Categories
اہم خبریں

ڈیل فائنل۔۔ رہائی کے بعد نواز شریف کی منزل کیا ہوگی؟فیصلہ ہو گیا

اسلام آباد(نیوز ڈیسک) سابق وزیر اعظم عمران خاں جو اس وقت جیل میں ہیں اور نیب کیسز میں سزا بھگت رہے ہیں جن کا کیس ضمانت کے لئے 18 ستمبر کو اسلام آباد ہائی کورٹ میں سماعت کے لئے مقرر ہو چکا ہے اور اس بار جو کچھ ہو گا وہ ڈیل فائنل ہوچکی ہے اس کے مطابق ہو گا اس بارے میں

سینئیر اینکر پرسن اور تجزیہ کار عمران خان نے نجی ٹی وی چینل کے پروگرام میں بات کرتے ہوئے کہا کہ کچھ دنوں کے بعد میاں نواز شریف کو عدالت سے ضمانت ملے گی۔ اُن کے کیس کا کوئی فیصلہ نہیں ہو گا۔ ضمانت کے بعد اُنہیں پاکستان سے باہر جا کر علاج کروانے کی اجازت بھی ملے گی۔ میاں نواز شریف صاحب پاکستان سے باہر چلے جائیں گے۔انہوں نے کہا کہ میں یہ نہیں کہہ رہا کہ میاں نواز شریف صاحب کو صحت کی بنا پر ضمانت ملے گی، اُنہیں اپنے مقدمے میں ضمانت ملے گی۔ ضمانت کے بعد انہیں صحت کی بنیاد پر بیرون ملک جانے کی اجازت ملے گی جس کے بعد میاں صاحب اپنے بچوں کے پاس علاج کروانے چلے جائیں گے۔ مریم نواز بھی پاکستان سے باہر چلی جائیں گی جس کے بعد نواز شریف کے کیسز التوا کا شکار ہو جائیں گے۔ پاکستان تحریک انصاف یہی کہتی رہے گی کہ ایک کرپٹ انسان ہے وہ صحت کا بہانہ کر کے باہر بھاگ گیا ہے۔ انہوں نے پاکستان کو تباہ کیا ہے۔ جبکہ مسلم لیگ ن کا یہ مؤقف ہو گا کہ میاں نواز شریف اُتنا ہی زیادہ بیمار ہیں جتنا اُن کی بیگم صاحبہ بیمار تھیں۔ اور میاں صاحب اپنے کیسز کا آ کر اُسی طرح سامنا کریں گے جیسے انہوں نے پہلے کیا۔ نہ وہ پہلے کبھی بھاگے ہیں نہ وہ اب بھاگیں گے۔اس وقت وہ بیمار ہیں ابھی نہیں آ سکتے۔ مریم نواز بھی عملی سیاست سے دور چلی جائیں گی اور غالباً آئندہ انتخابات میں

وہ وطن واپس آئیں گی ۔ اُس وقت مریم نواز اپنے والد کو بیرون ملک چھوڑ کر ہی واپس آئیں گی اور آ کر پاکستان کی سیاست میں عملی طور پر حصہ لیں گی۔ اس دوران مسلم لیگ ن اور پی ٹی آئی کو سیاست میں کھیلنے کا موقع مل جائے گا۔ اس کے علاوہ جو پیسہ آنا ہے وہ چیزیں طے ہو چکی ہیں۔ عمران خان نے کہا کہ میری اس خبر کو تاریخ لگا کر ریکارڈ کر کے رکھ لیں۔

Categories
اہم خبریں

وزیراعظم عمران خان کے بیٹے بھی والد کے نقش قدم پر چل پڑے جمائما خاںنے دونوں بیٹوں کی ایسی تصاویر شیئر کر دیں کہ ہر کوئی حیران

اسلام آباد(نیوز ڈیسک) وزیر اعظم عمران خاں کے دو بیٹے سلمان اور قاسم ہیں جو کہ سابقہ اہلیہ جمائمہ خاں کے بطن سے ہیں وہ اکثر اوقات اپنے والد عمران خاں سے ملنے پاکستان آتے جاتے رہتے ہیں دونوں بیٹے زندگی کا زیادہ تر وقت اپنی والدہ جمائمہ خاں کے پاس لندن میں ہی گزارتے ہیں .


وزیراعظم عمران خان کے بیٹے سلیمان اور قاسم بھی والد عمران خان کے نقش قدم پر چل پڑے،سابقہ اہلیہ جمائما نے دونوں بیٹوں کی کرکٹ میں انٹری کا عندیہ دے دیا،جمائما گولڈ اسمتھ نے انسٹاگرام پر بیٹوں کی کرکٹ ڈریس والی تصاویر بھی جاری کردیں۔وزیراعظم عمران خان کی سابقہ اہلیہ جمائما گولڈ اسمتھ نے انسٹاگرام پر دونوں بیٹوں کی کرکٹ میں انٹری کا عندیہ دے دیا ہے۔ تاہم عمرا ن خان نے کبھی بھی اپنے دونوں بیٹوں کی کرکٹ میں انٹری بارے تبصرہ نہیں کیا۔ لیکن بیٹوں سے متعلق سیاست کے حوالے سے ان کی دلچسپی کو وزیراعظم عمران خان متعدد بار مسترد کرچکے ہیں۔جمائما گولڈ اسمتھ کی اسٹوری میں دیکھا گیا کہ سلیمان اور قاسم کرکٹ ڈریس میں میدان میں موجود ہیں۔ایک اور تصویر میں وزیراعظم عمران خان کے صاحبزادے سلیمان کو بلے اور پیڈ میں دیکھا گیا ۔ واضح رہے وزیراعظم عمران خان دنیائے کرکٹ کے نہ صرف کامیاب مایہ ناز آل راؤنڈر رہے بلکہ مضبوط ترین کپتان اور 1992ء کا ورلڈ کپ جیتنے کا اعزاز بھی حاصل ہے۔ عمران خان کو دنیا کا ایک کامیاب شخص کہا جائے تو بے جا نہ ہوگا۔ سیاست میں سیاست میں قدم رکھنے سے پہلے

وزیراعظم عمران خان نے جب کرکٹ کی دنیا کو خیرباد کہا تو فلاحی اور سماجی کاموں میں بھرپور حصہ لیا۔ وزیراعظم عمران خان نے دنیا کا بہترین جدید سہولیات سے آراستہ شوکت خانم ہسپتال بنایا جہاں آج کینسر میں مبتلا مستحق لوگوں کا مفت علاج کیا جاتا ہے، اسی طرح میانوالی کے پسماندہ علاقے میں نمل یونیورسٹی بنائی۔بعدازاں وزیراعظم عمران خان نے الیکشن 2013ء میں حصہ لیا لیکن وہ صرف ایک صوبے کے پی میں حکومت بنانے میں کامیاب ہوسکے۔ لیکن الیکشن 2018ء میں وزیراعظم عمران خان نے الیکشن میں کامیابی حاصل کی اور وفاق سمیت پنجاب اور خیبرپختونخواہ میں حکومت بنانے میں کامیاب ہوگئے۔ جبکہ بلوچستان میں اُن کی اتحادی حکومت قائم ہے

Categories
آرٹیکلز

عبدالقادر آج ہم میں موجود نہیں مگر چند روز قبل وہ بھارتی وزیراعظم نریندر مودی اور عمران خان کے حوالے سے ایک تقریب میں کیا کہہ رہے تھے ؟ آپ بھی جانیے

اسلام آباد(نیوز ڈیسک) پاکستان کے مایہ ناز سابق لیگ اسپنر اور گگلی ماسٹر عبدالقادر اب ہم میں نہیں رہے پاکستان کے مایہ ناز کرکٹر عبدالقادر انتقال کر گئے۔ وہ کردار اور گفتار کے غازی تھے، جذبہ شہادت سے بھی سرشار تھے۔ وزیراعظم عمران خان سے ان کی محبت غیر مشروط تھی۔ چند روز قبل وہ کسی تقریب میں تھے وہاں انہوں نے


میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے نامور کالم نگار محمد اکرم چوہدری اپنے ایک کالم میں لکھتے ہیں ۔۔۔۔۔۔ عمران خان کو شیر اور بھارتی وزیراعظم نریندرا مودی کو بکری قرار دیا وہ کہہ رہے تھے عمران خان اور مودی کا کوئی مقابلہ نہیں۔ عمران خان سب کچھ کر سکتا ہے۔ میں نے اس جیسا بہادر شخص نہیں دیکھا۔ عبدالقادر کہہ رہے تھے کہ یہ قوم کشمیریوں کے ساتھ کھڑی ہے۔ افواج پاکستان کشمیری بھائیوں پر ہونے والے ظلم کو روکنے کے لیے ہر راستہ اختیار کریں گی۔کیا نفیس انسان تھے۔ اللہ ان کی مغفرت فرمائے۔ جتنی محبت انہوں نے لوگوں سے کی تھی ان کے دنیا سے جانے کے بعد ان کے پرستار اسے لوٹانے کی کوشش کر رہے ہیں۔ ہم سارا دن عبدالقادر کے انتقال کی کوریج دیکھتے رہے۔ لکھنے سے پہلے خیال آیا کہ عبدالقادر کے حافظ محمد عمران سے بہت اچھے تعلقات تھے ان سے پوچھتے ہیں کہ وہ اس حوالے سے کیا کہتے ہیں۔ حافظ عمران کو فون کیا تو بتانے لگے کہ چند روز قبل ہی ان سے مل کر آیا ہوں۔ عبدالقادر تو مجاہد کے روپ میں تھے۔ کشمیریوں کے لیے بہت دکھ تھا، بہت کرب اور تکلیف محسوس کر رہے تھے۔عبدالقادر سمجھتے تھے کہ وزیراعظم عمران خان کو بھارت کے ساتھ بات کرتے ہوئے نرمی کا مظاہرہ نہیں کرنا چاہیے۔ وہ کشمیر میں مسلمانوں کا قتل عام کر رہے ہیں تو ہمیں دو قدم آگے بڑھنے کی

 

کیا ضرورت ہے۔ ہمیں ان کا راستہ روکنا چاہیے۔ کہنے لگے مجھے ڈی جی آئی ایس پی آر میجر جنرل آصف غفور بہت پسند ہیں۔ کمال گفتگو کرتے ہیں۔ بالخصوص بھارت کو جواب دیتے ہوئے تو ایک ایک لفظ بہت بامعنی اور باوزن ہوتا ہے۔ آئی ایس پی آر کو چاہیے کہ کشمیر میں ہونے والے مظالم کی پوری ویڈیو بنائے اور اس ویڈیو کو ساری دنیا میں بھیجا جائے تاکہ دنیا دیکھ سکے کہ بھارت کشمیر میں کتنا ظلم و ستم کر رہا ہے۔ اقوام متحدہ میں پیش کریں، او آئی سی کو یہ سی ڈی بھجوائیں۔ دنیا خود دیکھے کہ اگر یہ ظلم ان کے اپنے شہریوں پر ہو تو ان کا ردعمل کیا ہو گا۔یہ ظلم ان کے مذہب سے تعلق رکھنے والوں کے ساتھ ہو تو کیا وہ خاموش رہیں گے۔ ہم نے سوال کیا کہ وہ وزیر اعظم کی کشمیر پالیسی پر خوش تھے تو حافظ عمران نے بتایا کہ عمران خان دنیا کو واضح الفاظ میں بتا رہے ہیں کہ مودی دور حاضر کا ہٹلر ہے۔ وہ مسلمانوں کو ہدف بنا کر ختم کر رہا ہے۔ آر ایس ایس کے نظریات کا پرچار کر رہا ہے۔ عمران خان ایٹمی ملک کا وزیراعظم ہے وہ اپنے خیالات اور بھارت کی پرتشدد کارروائیوں کے بارے دنیا کو بتا رہا ہے یہ سب ٹھیک ہے لیکن اسے یہ نہیں کہنا چاہیے کہ میں بھارت کی طرف دو قدم جاؤں گا جب نریندرا مودی ظلم و بربریت کے نئے ریکارڈ قائم کر رہا ہے تو ہمیں بھی بات چیت کی کوئی ضرورت نہیں ہے۔ باقی کھیلوں کی

 

باتیں اپنے کالم میں لکھوں گا اچھا کیا آپ نے فون کر لیا عمران خان کے دیرینہ دوست اورافواج پاکستان تک بھی عبدالقادر کا پیغام پہنچ جائے گا۔ عبدالقادر ہم میں نہیں ہیں۔ وہ اللہ کے حضور کشمیریوں کی آزادی کی دعا لے کر خود ہی پہنچ گئے ہیں۔ اللہ تعالیٰ ان کی دعا قبول اور خواہش پوری کرے۔ وزیراعظم عمران خان مسئلہ کشمیر کو حل کریں اور اگر کوئی غیر معمولی صورتحال ہوتی ہے تو افواج پاکستان اور پاکستانی قوم مل کر نریندرا مودی اور اسکی ظالم افواج کو شکست دے کر کشمیریوں کو آزاد کروائے۔اس وقت یہ سب سے اہم مسئلہ ہے۔ پاکستان تاریخ کے دوراہے پر کھڑا ہے۔ بھارت نے کشمیریوں کا کھانا پینا، ادویات، تعلیم، ہسپتال، رابطے کے ذرائع بند کر دیے ہیں۔ گھومنے پھرنے کی آزادی ختم کر دی ہے۔ کشمیریوں کو گرفتار کر کے بھارتی جیلوں میں بھیجا جا رہا ہے۔ کشمیر کی حوالاتوں میں جگہ کم پڑ گئی ہے۔ ان حالات میں عالمی طاقتوں اور اہم ممالک نے توجہ نہ دی اور اپنا کردار ادا نہ کیا تو خطے میں تباہی کے امکانات بڑھ جائیں گے۔ اگر کشمیریوں کے ساتھ یہی برتاؤ رکھا گیا تو پھر دونوں ممالک کے کروڑوں انسانوں کو بھی ا ن حالات کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے جن سے ان دنوں کشمیری گذر رہے ہیں۔ وزیراعظم بار بار اس اہم مسئلے پر دنیا کی توجہ دلا رہے ہیں۔ افواج پاکستان کی طرف سے بھی اس عزم کا اظہار بارہا کیا جا چکا ہے کہ

 

کشمیریوں کی حمایت جاری رکھی جائے گی۔ چیف آف آرمی سٹاف جنرل قمر جاوید باجوہ نے دو ٹوک اور واضح الفاظ میں کہا ہے کہ کشمیر تکمیل پاکستان کا نامکمل ایجنڈا ہے۔ آخری گولی، آخری سپاہی اور آخری سانس تک فرض ادا کریں گے۔ یہ ایٹمی طاقت کے حامل ملک کے سپہ سالار کے الفاظ ہیں۔ اس کا مطلب بہت واضح ہے۔ اس میں کہیں ابہام یا جھول نہیں ہے۔ اسکا مطلب ہے کہ ہم اپنے موقف پر سختی سے قائم ہیں۔ بھارت کی طرف سے کشمیر کی حیثیت بدلنے کی کوششیں ناقابل قبول ہیں۔اسکا یہ بھی مطلب ہے کہ تین سو ستر کا خاتمہ ہماری کشمیر سے وابستگی کو ختم نہیں کر سکتا۔ اس کا یہ بھی مطلب ہے کہ دنیا جان لے ہماری کشمیر کے ساتھ وابستگی کا پیمانہ کیا ہے۔ ہم کس حد تک کشمیر اور کشمیریوں کے لیے لڑ سکتے ہیں۔ اس لیے اب دنیا کی ذمہ داری ہے کہ وہ احساس کرے۔ پاکستان کو بند گلی میں دھکیلا گیا تو اس کا نقصان سب کو ہو گا۔ اگر کشمیر میں بھارتی مظالم، ہٹ دھرمی اور بین الاقوامی قوانین کی خلاف ورزی نہ روکی گئی تو اسکا نقصان سب کو اٹھانا پڑے گا۔ کیا عبدالقادر کے خیالات کسی فوجی سے کم ہیں، تریسٹھ برس کی عمرمیں بھی وہ کشمیریوں کی مدد کا جذبہ رکھتے تھے۔ آج قوم کو اسی جذبے کی ضرورت ہے۔ ہمیں یقین ہے کہ قوم متحد ہے، وزیراعظم اپنے مشن سے جڑے ہوئے ہیں اور کامیابی کے لیے پرعزم ہیں۔ افواج پاکستان قوم کی توقعات پر پورا اترے گی۔ بھارت کے ناپاک عزائم خاک میں ملائے جائیں گے اور سب مل کر نعرہ لگائیں گے۔ پاکستان زندہ باد۔پائندہ باد